2020 College News Latest News

گورنمنٹ کالج شیخوپورہ کا تشخص برقرار رکھتے ہوئےیونیورسٹی بنائی جاے

صوبائی وزیر ڈائزاسٹر مینجمنٹ میاں خالد محمود نے صوبائی حکومت سے منظوری کروا کر ایک ڈائریکٹو کروایا کہ اس کو عملی جامعہ پہنانے جاے تو بیوروکریسی نے پھر وہی روایتی فارمولا  نکالا اور گورنمنٹ کالج شیخوپورہ کے بورڈ کو تبدیل کر کے یونیورسٹی بنانے کے لیے فزیبلٹی  رپورٹ بنانے کے لیے نیچے بھیج دیا چب یہ خبر استاتذہ اور شہر کے پڑھے لکھے لوگوں تک پہنچی تو ہر  جگہ تشویش کی اک لہر دوڑ گئی گورنمنٹ کالج شیخوپورہ ایک بہت کامیاب اور عمدہ ساکھ کا حامل ادارہ ہے اس کو یونیورسٹی میں تبدیل کرنا ایک غیر دانشمندانہ فیصلہ ہے اس سے نہ صرف اساتذہ عوام برائے راست متاثر ہو ں گے رد عمل یقینی تھا اساتذہ نے ایک ایکشن کمیٹی تشکیل دی جنہوں نے پروفیسر اکرم سرا کی سر براہی میں کام شروع کر دیا دیگر اراکین میں پروفیسر خرم علی ورک ،پروفیسر محمد سلیم ،پروفیسر علی وقاص ،پروفیسر کرامت علی، پروفیسر محمد بوٹا اسی، پروفیسر مقصود مغل،پروفیسر محمد افضل شامل ہیں آج آس کمیٹی نے مندرجہ بالا وزیر سے ملاقات کی پرنسپل گورنمنٹ کالج پروفیسر حافظ ثناء اللہ تکنیکی معاونت کے لیے موجود تھے وفد نے صوبائی وزیر کو دلائل دیتے ہوے قائل کرلیا کہ گورنمنٹ کالج شیخوپورہ کے تشخص کو ختم کر کے یونیورسٹی بنانے کی کوشش غلط ثابت ہو گی اساتذہ کا موقف وزیر موصوف پر واضح کیا کہ کالج اساتذہ یونیورسٹی بنانے کے ہرگز مخالفت نہیں وہ اسے خوش آمدید کہیں گے وہ اپنی خدمات بھی پیش کر یں گے لیکن اگر انڈیپنڈنٹ حیثیت میں قائم کیا جاے اس ضلع میں بہت سی جگہیں سرکاری ملکیت میں موجود ہیں ان میں سے کسی ایک کو منتخب کر کے وہاں بلڈنگ تعمیر کروا کے تمام دیگر سہولیات فراہم کر کے شروع کیا جائے تو یہ مناسب ہوگا انہوں نے ایسی بہت سی جگہوں کی نشاندھی بھی کی وزیر موصوف نے اس سے اتفاق کرتے ہوئے ان لائنوں پر کام کرنے کا وعدہ کیا

Related posts

ملتان:جوائنٹ ایکشن کمیٹی نے احتجاجی تحریک کا آغاز کردیا

Ittehad

پبلک سروس کمیشن سے نو منتخب سات مضامین کے اٹھانوے مرد لیکچررزکی تعیناتی

Ittehad

رہنما اتحاد اساتذہ محمد تبسم رسول مدت ملازمت کی تکمیل پر ریٹائر ہو گئے

Ittehad

Leave a Comment